اردوئے معلیٰ

آباد رہیں تیرے تبسم کے جزیرے

ہم بحر حوادث سے نہ ابھرے بھی تو کیا ہے

 

معمور و منور ہوں ترے روپ کے ساحل

ہم لوگ اگر پار نہ اترے بھی تو کیا ہے

 

نکھرا ہی رہے اوس کی بوندوں سا یہ چہرہ

حالاتِ گلستان نہ سدھرے بھی تو کیا ہے

 

ہم لوگ تھے شہکار ترے دستِ قضا کا

مانے بھی تو اب کیا ہے جو مکرے بھی تو کیا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات