اردوئے معلیٰ

آخر غبارِ دشتِ ہزیمت میں ڈھے گئے

عشاقِ کم نصیب تری جستجو میں تھے

 

اب ان کا زکر بھی نہ رہا داستان میں

کل جو محاوروں کی طرح گفتگو میں تھے

 

خواہش کے ساتھ ساتھ فراموش ہو گئے

جو خوش گمان لوگ تری آرزو میں تھے

 

اک برف سی رواں ہے رگ و پے میں آجکل

رقصاں کبھی جنون کے شعلے لہو میں تھے

 

آنکھوں میں خونِ خوابِ وفا نقش ہو گیا

ورنہ ہزار رنگ غمِ سرخرو میں تھے

 

روشن ہوئے نہ پھر کسی آواز سے چراغ

مانا کہ لاکھ عیب ترے خوش گلو میں تھے

 

جس وقت چاکِ زخمِ انا سی رہے تھے تم

ریشے مرے بدن کے بھی تارِ رفو میں تھے

 

ناصر کہولتوں کا زمانہ ہے کیا کریں

وہ ولولے کہاں کہ جو عہدِ نمو میں تھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات