اردوئے معلیٰ

Search

آرزوؤں کا نشانہ ہو گیا

دل مرا آخر دوانہ ہو گیا

 

رہ گئی تھی اک حقیقت آخری

عشق بھی آخر فسانہ ہو گیا

 

خواب سے نکلا تو کیا دیکھا کہ وہ

خواب ہی میرا پرانا ہو گیا

 

آئنہ چہرے مقابل ہی نہیں

خود کو دیکھے اک زمانہ ہو گیا

 

بجھ گیا ہے دل سرائے کا دیا

کارواں شاید روانہ ہو گیا

 

راکھ ہو کر ہی نہیں دیتا ظہیرؔ

جلتے جلتے اک زمانہ ہو گیا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ