اردوئے معلیٰ

Search

آنکھ بھر کر دیکھ لیں بس آپ جو ختمُ الرُّسُل

ہم غریبوں کا بھی بیڑا پار ہو ختمُ الرُّسُل

 

پیاس بڑھتی جا رہی ہے اس گدا کی ہر گھڑی

اپنے درشن بخش دِیجے آج تو ختمُ الرُّسُل

 

جس نے حق کے رو برُو اُمّت کی بخشِش، مانگ لی

آپ وہ اللہ کے پیارے ہیں وہ ختم الرّسل

 

وقت جِتنا بھی کٹِھن ہو، مُشکلیں آسان یوں

ذوق سے، وجدان سے مِِل کر کہو، ختمُ الرُّسُل

 

جاہلوں کی بدنصیبی ضِد پہ اپنی اڑ گئے

ورنہ پتھر مانتے تھے آپ کو ختمُ الرُّسُل

 

ہر طرف غارت گری تھی، ظُلمُ و اِستبداد تھا

خاتمے کو جبر کے اب آئے لو ختمُ الرُّسُل

 

اور اس سے بڑھ کے دنیا میں بھلا رتبہ ہے کیا

روز و شب ختمُ الرُّسُل بولو، سُنو ختمُ الرُّسُل

 

آپ سے پہلے نہ اُس کے بعد تھا مُمکِن کوئی

چُن لیا اللہ نے سو آپ کو ختمُ الرُّسُل

 

آج بھی شہرِ نبی کی دل میں ہے حسرت رشِیدؔ

میں، مِری بے چارگی، سائے ہیں دو ختمُ الرُّسُل

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ