اردوئے معلیٰ

Search

آنکھ میں آنسو سجا کے ہم مدینے آئے ہیں

بندگی کا شوق اور عشقِ نبی لے آئے ہیں

 

اب نگاہوں کو کوئی منظر لبھاتا ہی نہیں

روضۂ سرکار کا دیدار کر کے آئے ہیں

 

اب تو آ جائے یہاں پر موت ہم کو اے خدا

مار کے دنیا کو ٹھوکر ہم مدینے آئے ہیں

 

اب تو بلوا لیجئے سرکار طیبہ میں ہمیں

قافلے اشکوں کے راہِ غم پہ ہم لے آئے ہیں

 

کیوں نہ ہو پھر ناز ہم کو اے فداؔ تقدیر پر

جلوۂ نورِ نبی دل میں بسائے آئے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ