اردوئے معلیٰ

آپ کا ذکر ہونٹوں پہ ہے دم بدم

آپ کا ذکر ہونٹوں پہ ہے دم بدم

آپ کی ذات ہے برتر و محتشم

ہم کو طیبہ بلا لیں براہِ کرم

اے حبیبِ خدا اے شفیعِ امم

 

ہم کو گھیرے ہوئے ہیں جہاں کے الم

رحمت عالمیں افضل و محترم

غم کے مارے ہوئے ہیں پریشان ہم

اے حبیبِ خدا اے شفیعِ امم

 

کب سے ہم ہیں طلب گارِ چشمِ کرم

ہو کرم ہم پہ اے قاطعِ رنج و غم

ٹوٹ جائے نہ ہم عاصیوں کا بھرم

اے حبیبِ خدا اے شفیعِ امم

 

ہم کو اب تو مدینہ بلا لیجئے

سبز گنبد کا جلوہ دکھا دیجئے

اس سے پہلے کہ ہم جائیں ملکِ عدم

اے حبیبِ خدا اے شفیعِ امم

 

آپ کی تو ہے توصیف قرآن میں

آپ کی یاد تو ہے دلو جان میں

آج حاضر فداؔ بھی ہے با چشم نم

اے حبیبِ خدا اے شفیعِ امم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ