اب زمانے سے کوئی شکوہء بیداد نہیں​

اب زمانے سے کوئی شکوہء بیداد نہیں​

اب سوائے درِ اقدس مجھے کچھ یاد نہیں​

 

​اللہ اللہ مدینے کے سفر کا عالم​

دشت میں ہے مجھے وہ عیش کہ گھر یاد نہیں​

 

​عالمِ حرص و ہوَس میں غمِ آقاؐ کے سوا​

سرخوشی کی کوئی صورت دلِ ناشاد نہیں ​

 

​جب سے سرکارؐ نے بخشا ہے شعورِ توحید​

جز خدا کعبہء دل میں کوئی آباد نہیں ​

 

​صدمہء ہجر سے دل محوِ فغاں ہے آقا

یہ الگ بات کہ لب پر مِرے فریاد نہیں​

 

​آپ وہ مہرِ مجسم کہ نہ بھولے مجھ کو​

میں وہ کمبخت جسے رسمِ وفا یاد نہیں​

 

​میری روداد کا عنوان ہے عشقِ سرکارؐ​

جس میں یہ وصف نہیں وہ مِری روداد نہیں ​

 

​میرے کردار کی تعمیر کے بانی ہیں حضور​

موجہء آبِ رواں پر مِری بنیاد نہیں ​

 

​للہ الحمد !حزیں ہیں میرے استاد ایاز​

ہائے وہ شخص کہ جس کا کوئی استاد نہیں ​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

زیرِ افلاک نطق آقا کا
حدودِ طائر سدرہ، حضور جانتے ہیں
ہماری جاں مدینہ ہے، ہمارا دل مدینہ ہے
خدا نے مغفرت کی شرط کیا راحت فزا رکھ دی
محمد مصطفیٰ یعنی خدا کی شان کے صدقے
زندگی شاد کیا کرتی ہے
نعت لکھنی ہے مگر نعت کی تہذیب کے ساتھ
لمحہ لمحہ شمار کرتے ہیں
مدینہ کی بہاروں سے سکونِ قلب مِلتا ہے
ہوں میری باغ و بہار آنکھیں

اشتہارات