اردوئے معلیٰ

Search

اسمِ اعظم مرے آقا کا ہے ایسا تعویذ

جس سے تاثیر لیا کرتے ہیں جملہ تعویذ

 

نعتِ سرکار سے آسیبِ سَقَر دور ہوا

بن گیا دفترِ اعمال بھی گویا تعویذ

 

ہے وظائف میں اگر مدحِ لعابِ شافی

نقشِ ہر کارہ ہے پھر آپ کا لکّھا تعویذ

 

عیسیِ حرفِ ثنا جس کی مسیحائی کرے

اس کو درکار کہاں پھر کوئی دوجا تعویذ

 

تیری امت کےلیے رب نے برائے تحفیظ

سورۂِ ناس و فلق کا ہے اتارا تعویذ

 

جادوئے سامریِٔ نفس چلے گا کیسے

موسیِ عشق محمد ہے ہمارا تعویذ

 

یوں ہے ہر غم کی دوا نعتِ جبینِ مصحف

جیسے ہے فاتحہ ہر کرب و مرض کا تعویذ

 

جس پہ لگ جائیں مسیحائے مدینہ کے قدم

خاک بن جا ئے وہ مثلِ دمِ عیسٰی تعویذ

 

نہیں ممکن ، کہ ہمیں پہنچے بَلائے آسیب

’’ ہے حصار ان کی عنایت کا ہمارا تعویذ ‘‘

 

خواب میں جس کے سبب جلوۂ احمد ہو نصیب

کاش مِل جائے معظمؔ کوئی ایسا تعویذ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ