اسوۂ کاملہ مرحبا مرحبا

اسوۂ کاملہ مرحبا مرحبا

خلد کا راستہ مرحبا مرحبا

 

رشک جس پر کریں سب کے سب انبیأ

آپ کا مرتبہ مرحبا مرحبا

 

ظلمتِ شب میں ان کے قدم سے ہوئی

نور کی ابتدا مرحبا مرحبا

 

وہ تہی دامنوں پر رہیں ملتفت

وہ سراپا سخا مرحبا مرحبا

 

جن کے ملبوس پر چاند پیوند کے

وہ شۂ دوسرا مرحبا مرحبا

 

مجھ پہ تیرا کرم اور لطف و عطا

میرے خیرالوریٰ مرحبا مرحبا

 

اپنی قسمت پہ اشعرؔ مجھے ناز ہے

اُن کا مدح سرا مرحبا مرحبا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ