اردوئے معلیٰ

اسیرِ گردشِ دوراں رہی ہے زندگی برسوں

ہمارے پاس ہو کر بھی نہیں گزری خوشی برسوں

 

خرد مندوں نے کی اہلِ جنوں کی رہبری برسوں

کہ فرزانے رہے منت کشِ دیوانگی برسوں

 

ہمیشہ عشق کی بدقسمتی پر ہم رہے گریاں

ہمارے حال پر گریاں رہی بدقسمتی برسوں

 

تعجب ہے کہ برسوں گلستاں کی یاد میں تڑپے

تعجب ہے نہ آئی گلستاں کی یاد بھی برسوں

 

نہ ہم بھولے نہ ان سے رشتۂ عہدِ وفا ٹوٹا

دلوں میں یوں تو کہنے کے لیے رنجش رہی برسوں

 

تبسم تک نہ آیا لب پہ ایسا وقت بھی گزرا

رہی طاری ہجومِ درد میں سنجیدگی برسوں

 

سکھائے لاکھ ساقی نے سحرؔ آدابِ مے نوشی

مگر آیا نہ رندوں کو شعورِ مے کشی برسوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات