اردوئے معلیٰ

Search

اللہ کے حبیب و پیمبر پہ ہو سلام

سلطان انبیاء پہ ہو، سرور پہ ہو سلام

 

دونوں جہاں کے مہر منور پہ ہو سلام

ذات خدا کے شاہد و مظہر پہ ہو سلام

 

نور خدا پہ شافع محشر پہ ہو سلام

خیرالبشر پہ ساقیٔ کوثر پہ ہو سلام

 

جان مسیحا حامی و یاور پہ ہو سلام

انسانیت کے محسن و رہبر پہ ہو سلام

 

شہر نبی پہ، روضۂ انور پہ ہو سلام

میرے نبی کے مسجد و منبر پہ ہو سلام

 

داماد مصطفیٰ پہ ہو حیدر پہ ہو سلام

شبیر پہ ہو آپ کے شبر پہ ہو سلام

 

خیرالنساء پہ آپکی دختر پہ ہو سلام

تطہیر والی آپکی چادر پہ ہو سلام

 

عابد، علی رضا پہ ہو، باقر پہ ہو سلام

موسیٰ، نقی، تقی پہ ہو، جعفر پہ ہو سلام

 

میرے رسول پاک کے والد پہ با ادب

میرے رسول پاک کی مادر پہ ہو سلام

 

آدم سے لیکے حضرت عیسٰی تلک سبھی

نبیوں پہ ہو رسول و پیمبر پہ ہو سلام

 

سارے جہاں سے افضل و اعلی پہ ہو درود

سب سے بلند و بالا پہ بہتر پہ ہو سلام

 

سارے جہاں کے مالک و مختار پہ درود

سارے جہاں کے والی و یاور پہ ہو سلام

 

تخلیق سب سے پہلے ہوا آپ ہی کا نور

میرے خدا کے نائب اکبر پہ سلام

 

بچین، دلفگار کے یاور پہ ہو درود

تسکین قلب بندۂ مضطر پہ ہو سلام

 

مدھم ہے جسکے سامنے شمش و قمر کا نور

یعنی نبی کے چہرۂ انور پہ ہو سلام

 

سائے میں جس کے حشر میں آرام پائیں گے

میرے نبی کی زلف معطر پہ ہو سلام

 

خوشبو سے جسکے طیبہ کی گلیاں مہک اٹھیں

آقا کے اس پسینۂ اطہر پہ ہو سلام

 

صدیق پہ ہو، عثماں پہ، فاروق پہ بھی ہو

مولا علی پہ فاتح خیبر پہ ہو سلام

 

عباس پہ ہو، حضرت حمزہ پیا پہ ہو

اللہ کے رسول کے گھر بھر پہ ہو سلام

 

عباس، قاسم، اکبر و اصغر پہ ہو سدا

سلطان کربلا کے بہتر(٧٢) پہ ہو سلام

 

اصحاب مصطفیٰ پہ دل و جان سے فدا

ان جانثار شاہ پیمبر پہ ہو سلام

 

آتے ہیں صبح و شام ترے روضے پہ قدسی

اس دلنشیں و دلکش منظر پہ ہو سلام

 

شہر نبی کے کنکر و پتھر کو کیا کہوں

شہر نبی کے کنکر و پتھر پہ ہو سلام

 

بغداد والے غوث پہ روشن ضمیر پہ

ہند الولی پہ خواجۂ سنجر پہ ہو سلام

 

چشتی و قادری و سہرورد و نقشبند

فیض و کرم کے سارے سمندر پہ ہو سلام

 

داتا پہ ہو، فرید پہ، قطب و نظام پہ

وارث علی پہ صابر کلیر پہ ہو سلام

 

احمد رضا، نقی علی، دادا رضا علی

حامد پہ، مصطفیٰ پہ ہو، اختر پہ ہو سلام

 

پیدا ہوا ہوں امت آقا میں اس لئے

مجھکو ہے ناز، میرے مقدر پہ ہو سلام

 

سب کو سلام یا نبی کرتا ہوں باادب

تیرے ہر ایک نوکر و چاکر پہ ہو سلام

 

شاہد جہاں پڑے ہیں مرے شاہ کے قدم

شہر رسول پاک کے اس در پہ ہو سلام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ