اردوئے معلیٰ

Search

الہامِ نعت ہوتا ہے چاہت کے نور سے

میرا قلم رواں ہے محبت کے نور سے

 

خاکِ مدینہ تاروں سے بڑھ کر حسیں ہوئی

سرکار کے نواسوں کی شوکت کے نور سے

 

آنے لگا ہے خضرٰی خیالوں میں دم بدم

الہام عنبریں ہے بلاغت کے نور سے

 

سر سبز ہو گیا ہوں اگرچہ خزاں تھا میں

خضرٰی کی دل نشین رفاقت کے نور سے

 

خوشبو کا ہے بسیرا مدینے کی خاک میں

مہکی ہوئی ہے مولا کی نکہت کے نور سے

 

توقیر بٹ رہی ہے جو سارے جہان میں

سب مل رہی ہے آقا کی عزت کے نور سے

 

بڑھتا ہی جا رہا ہے گلستاں میں نورِ گل

احمد کی بے مثال وجاہت کے نور سے

 

مدحت بیان کرنی ہو قائم تو یاد رکھ

الفاظ لا قران کی رفعت کے نور سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ