اردوئے معلیٰ

Search

ان کی چوکھٹ پہ جھکانا ہے جبینِ دل کو

رشکِ فردوس بنانا ہے زمینِ دل کو

 

یثربِ دل کو مدینے میں بدل ڈالا ہے

دل کے سجدوں کی سلامی ہو مکینِ دل کو

 

عقل کی آنکھیں بھلا کیسے وہ مکھڑا دیکھیں

پردہِ عشق میں رکھا ہے حسِینِ دل کو

 

لمحہ بھر میں وہ چلے آتے ہیں سن کر عرضی

ٹوٹنے دیتے نہیں آقا یقینِ دل کو

 

ہاں تری دید ہی ہے قلبِ پریشاں کا سکوں

مطمئن کر نہ سکے اور خزینے دل کو

 

دلربا ! آپ کو دل اپنا نذر کرتا ہوں

تاکہ بیگانہ کوئی مجھ سے نہ چھینے دل کو

 

خستہ حالی نے تبسم تجھے بیمار کیا

چین آیا بھی تو آئے گا مدینے دل کو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ