اردوئے معلیٰ

Search

اوج کا آخری نشاں تری بات

مطلعِ کُن پہ ضَوفشاں تری بات

 

لبِ یوحیٰ سے بولنے والے !

جاوداں تُو ہے ، جاوداں تری بات

 

تُو اذان و نماز کا منشا

ہے کہاں اور نہیں کہاں تری بات

 

بس یہی تو ہے ایک وجہِ نمو

دمِ ہستی میں ہے رواں تری بات

 

لفظ تیرے ازل ، ابد کو محیط

ماورائے مکاں ، زماں تری بات

 

کون سمجھے یہ رازِ سر بستہ

جب عیاں ہو کے نہاں تری بات

 

خیر و خوبی کی سلسبیلِ کرم

رنگ و نکہت کا گُلتساں تری بات

 

جیسے خوشبو درونِ غنچہ و گُل

ایسے باتوں کے درمیاں تری بات

 

غایتِ کُن کا رازداں تُو ہے

علم و حکمت کا ارمغاں تری بات

 

بخشے جائیں گے ہم بہ پاسِ ثنا

مانی جائے گی بے گماں ، تری بات

 

نعت ، خیراتِ اذن ہے مقصودؔ

ورنہ ، وہ ذات اور کہاں تری بات

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ