اوج کے نقشِ چمن زار سے جا ملتا ہے

اوج کے نقشِ چمن زار سے جا ملتا ہے

حرف جب مدحتِ سرکار سے جا ملتا ہے

 

منبرِ نُور سے کھِلتا ہُوا اِک خُلد کا رنگ

حُجرۂ قُدس کی دیوار سے جا ملتا ہے

 

راستہ بھُول کے بھی طائرِ خود رفتہ خُو

تیرے ہی دشت کے اشجار سے جا ملتا ہے

 

زیست اب دائمی انفاس کی تدبیر کرے

دستِ شافی کفِ بیمار سے جا ملتا ہے

 

خواب میں چھُو کے ترے شہرِکرم کی طلعت

شب گُزیدہ درِ انوار سے جا ملتا ہے

 

ایک ہی بار نمو پاتا ہے اِک حرفِ دُعا

مُدعا منظرِ صد بار سے جا ملتا ہے

 

کاسۂ چشم میں رخشاں ہے ترے کُوچے کی گرد

پھُول سا دل بھی سرِ خار سے جا ملتا ہے

 

جو رہا رفعتِ نعلینِ کرم سے محروم

سلسلہ اُس کا تو ادبار سے جا ملتا ہے

 

اس قدر وسعتِ خیرات ہے اُن کو زیبا

جُود خُود دامنِ نادار سے جا ملتا ہے

 

حاصلِ عرصۂ بیدارئ کُل ہے واللہ

لمحۂ خواب جو دیدار سے جا ملتا ہے

 

موجزن ہوتا ہے جب بحرِ شفاعت مقصود

موجۂ عفو گنہگار سے جا ملتا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
مہر ھدی ہے چہرہ گلگوں حضورؐ کا
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
حَیَّ علٰی خَیر العَمَل
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
تجھے مِل گئی اِک خدائی حلیمہ
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
نہیں شعر و سخن میں گو مجھے دعوائے مشاقی

اشتہارات