اردوئے معلیٰ

Search

اَب کے ہے دل میں ، تِرا وصف کچھ ایسا لِکّھوں

فِقہی الفاظ میں اِک تیرا قصیدہ لکھوں

 

فن کے بَل پر نہیں ممکن کہ ذرا سا لکھوں

تو اگر چاہے تو پھر پیارے ! میں کیا کیا لکھوں

 

خَلق میں خُلق میں ،کُل خَلق سے اَعلٰی لِکھوں

تجھ کو اَشباہ و نظائر سے منزّہ لکھوں

 

تجھ کو اے سارے رسولوں کے امامِ اعظم

مرکزِ تربیتِ صاحبِ اِفتا لِکّھوں

 

مالکِ ملکِ خدا ! شافعِ روزِ محشر

تجھ کو احمد تیری مِلّت کو حَنیفہ لِکّھوں

 

اے ابو یوسفِ کنعاں ! ہے شریعت مانِع

ورنہ میں بعدِ نِدا نام تمہارا لِکّھوں

 

تجھ کو ہر وصف کی رُو سے بھی مُحمّد مانوں

مَظہرِ ذاتِ اَحَد ، آقا و مولیٰ لِکّھوں

 

دُرِّ مختار تجھے سلکِ شریعت کا کہوں

جَوہرہ نَیِّرہ مَنظوم ھُدٰی کا لِکّھوں

 

کیا تِرے وصفوں کے جامع ہوں صغیر اور کبیر

تجھ کو میں مَرویِ ظاہرِ سے بھی اونچا لکھوں

 

نُطق کو تیرا دہن وا ہے ، سرِ فتحِ قدیر

تیرے لفظوں کو فقاہت کی ہدایہ لِکّھوں

 

جو بدائع ہیں ,صنائع ہیں ، تِرے حرف کے نام

نُطق کو تیرے بلاغت کا حدیقہ لِکّھوں

 

بحر رائق ! ،تو ، تکلُّم تِرا نہرِ فائق

تجھ کو تبیینِ حقائق کا ذریعہ لِکّھوں

 

بہرِ ایجابِ دعا ہیں جو وسائل درکار

سب سے اَنفَع میں ترے نام کا لینا لکھوں

 

شانِ مبسوط میں ہر لمحہ زیادات کی دھوم

آیۂ ” خَیرْ مِنَ الْاُوْلی ” کا معنٰی لکھوں

 

مُلتَقٰی اَبحُرِ عرفانِ الٰہی کا کہوں

اَنھُرِ فیض کا مَجمَع تجھے شاہا ! لکھوں

 

نورِ ایضاحِ معارف ترا حرفِ افصح

چرخِ توضیح بَتلویح کا تارا لکھوں

 

تیری اِمداد کو اِمداد زِ فَتّاح کہوں

ہاتھ کو تیرے مُعَنوَن بَہ یَدُ اللّٰہ لِکّھوں

 

غُنیَہ از پئے مُتَمَلِّی تِری صورت کو کہوں

مُنیۂِ قلبِ مُصَلِّی تِرا حُلیہ لکّھوں

 

مَصدرِ ناقل و منقول و روایت مانوں

تجھ کو میں حاصلِ معقول و دِرایہ لِکّھوں

 

اَصلِ عالَم ہے تَجَمُّل تِرا عالَمگیری

علم قاضی ہے کہ یوسف تِرا بندہ لکھوں

 

خلق کی تجھ سے بِدایت ، ہے نہایت تجھ پر

تیری مرضی کو میں نیکوں کی سِعایہ لکّھوں

 

ردِّ محتار ترا علم ، تو جدِّ ممتار

کنزِ تدقیق پہ تیرا ہی میں قبضہ لِکّھوں

 

فقہِ اسلام و اَدِلَّہ کا تو ماخذ ٹھہرا

تجھ کو میں ناسخِ اَدیانِ گزشتہ لکھوں

 

رب کی بُرھان ! ہر اک شَے کو تِرا علم مُحیط

تجھ کو اَسحار کی نَسمات کا دانا لکھوں

 

اَمجدِ اہلِ تَمَجُّد ! تُو شریعت کی بہار

رَضَوی فتووں کو میں تیری عَطایا لکھوں

 

رسمِ مفتی کے عقود آپ کے ناخن سے کُھلے

ہاتھ تاسیسِ قواعد کا وسیلہ لکھوں

 

وردِ نامِ شہِ والا کو کہوں زادِ مَعاد

حرفِ مدحت کو میں عُقبٰی کا ذخیرہ لکھوں

 

خوفِ تَطویل ہے ،تشویشِ اَحِبّا کا خیال

ورنہ سب فِقہی کتابوں کا مُسمّٰی لِکّھوں

 

اے معظمؔ ! ہے بِلا رَیب یہ سب فیضِ رسول

ورنہ ممکن ہے یہ کیسے کہ میں ایسا لِکّھوں ؟

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ