اردوئے معلیٰ

Search

اُجلی ردائے عکس کو میلا کہیں گے لوگ

آئینہ مت دکھائیے، جھوٹا کہیں گے لوگ

 

شاخیں گرا رہے ہیں مگر سوچتے نہیں

پھر کس شجر کی چھاؤں کو سایہ کہیں گے لوگ

 

واقف ہیں رہبروں سے یہ عادی سراب کے

دریا دکھائیے گا تو صحرا کہیں گے لوگ

 

شہرت کی روشنی میں مسلسل اُچھالئے

پتھر کو آسمان کا تارا کہیں گے لوگ

 

آغازِ داستاں ہے ذرا سنتے جائیے

آگے تو دیکھئے ابھی کیا کیا کہیں گے لوگ

 

جو کچھ برائے زیبِ بیاں کہہ رہے ہو آج

کل اُس کو داستان کا حصہ کہیں گے لوگ

 

لوگوں کو اختیار میں حصہ تو دیجئے

اربابِ اختیار کو اپنا کہیں گے لوگ

 

فردِ عمل پہ کر کے رقم اپنے فیصلے

اپنے لکھے کو بخت کا لکھا کہیں گے لوگ

 

شکوہ کرو نہ دیدۂ ظاہر پرست کا

جیسے دکھائی دیتے ہو ویسا کہیں گے لوگ

 

کس شہرِ خود فریب میں جیتے ہو تم ظہیرؔ

اپنا سمجھ رہے ہیں نہ اپنا کہیں گے لوگ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ