اُنؐ کے رستوں کی گردِ سفر مانگنا

اُنؐ کے رستوں کی گردِ سفر مانگنا

بھول جاؤ گے لعل و گہر مانگنا

 

مانگنا ربِّ اکبر سے عشقِ نبیؐ

سِیم و زر نہ ہی شمس و قمر مانگنا

 

آپؐ بن مانگے بھی کر رہے ہیں عطا

ہم پہ واجب ہے پھر بھی مگر مانگنا

 

اُنؐ سے کم مانگنا بھی ہے سوئے ادب

اُنؐ سے جب مانگنا بیشتر مانگنا

 

جب بھی طیبہ نگر کا ہو عزمِ سفر

اُنؐ سے زادِ سفر، بال و پر مانگنا

 

میرے آقاؐ کو بالکل نہ اچھا لگا

مجھ خطا کار کا در بدر مانگنا

 

جو خدا کے حبیبؐ اور محبوبؐ ہیں

پیار اُنؐ کا خدا سے ظفرؔ مانگنا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مرے سرور مدینہ ترا نام چل رہا ہے
اے شاہِ امم، سیّدِ ابرار یا نبیؐ
جب آقا سے میری ملاقات ہو گی
شعبِ احساس میں ہے نور فِشاں گنبدِ سبز
مبتدا کی دید کرتے ، منتہیٰ کو دیکھتے
احسان ہے خدائے علیم و خبیر کا
نہ صرف یہ کہ پیمبر بنا کے بھیجے گئے
میں رہوں نغمہ طرازِ شہِ دیں حینِ حیات
غنچۂ لب مسکرائے مصطفیٰ کے نام سے
کم ہے محیطِ فکر اور تنگ ہے ظرفِ آگہی

اشتہارات