اُنہی کا نور پھیلا ہے جدھر دیکھو جہاں دیکھو

اُنہی کا نور پھیلا ہے جدھر دیکھو جہاں دیکھو

اِدھر دیکھو اُدھر دیکھو یہاں دیکھو وہاں دیکھو

 

غلاموں کی رسائی تا بہ بزمِ قدسیاں دیکھو

کہاں سے اُن کی نسبت نے ہے پہنچایا کہاں دیکھو

 

اثر ہے دامنِ سرکار سے وابستہ ہونے کا

عیاں ہونے لگے کس طرح اسرارِ نہاں دیکھو

 

جوابِ ہر سوالِ ماضی و فردا ملا اُن سے

گماں تک بھی نہیں ایسے مٹے وہم و گماں دیکھو

 

ہر سو بارشِ انوارِ رحمت ہے مدینے میں

یہ ہے دربار آقا کا کہ جنت کا نشاں دیکھو

 

ہم اپنی تنگ دامانی سے عاجز ہوگئے ورنہ

ہے لطف و جود و رحمت کا یہاں دریا رواں دیکھو

 

گنہہ گار اُن کے در پر جائیں یہ حکمِ اِلٰہی ہے

وہ راضی ہوں تو پھر ہوتا ہے حکمِ کُن فکاں دیکھو

 

کسی صورت کسک اس درد کی کم ہو نہیں پاتی

علاجِ درد سے بڑھتا ہے کیوں دردِ نہاں دیکھو

 

گدائے در پریشاں حال محشر میں رہے کیوں کر

انیسِ بے کساں دیکھو شفیعِ عاصیاں دیکھو

 

کرم سے اُن کے اُن کی نعت ہوتی ہے رقم عارفؔ

مری بے مایگی دیکھو مرا طرزِ بیاں دیکھو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مرے آقاؐ تشریف لائیں گے اِک دِن
خُداوندا! مرا دِل شاد رکھنا
جو مجھ سے خطا کار و زیاں کار بھی ہوں گے
اے ختمِ رسل نورِ خدا شاہِ مدینہ
ان کا نہیں ہے ثانی نہ ماضی نہ حال میں
امکانِ حرف و صوت کو حیرت میں باندھ کر
وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود
میں ، مری آنکھیں ، تمنائے زیارت ، روشنی
نبی اکرمؐ شفیع اعظمؐ دکھے دلوں کا پیام لے لو
آنکھ گنبد پہ جب جمی ہوگی