اردوئے معلیٰ

اُن کی رضا پہ جو بھی رضا مند ہوگئے

 

اُن کی رضا پہ جو بھی رضا مند ہوگئے

مقبولِ بارگاہِ خداوند ہوگئے

 

اُمڈا جو سیل اشک تو پلکوں کو سی لیا

گویا گُہر صدف میں نظر بند ہوگئے

 

آزاد ہوگئے غمِ روزِ حساب سے

جو لوگ ان کے لطف کے پابند ہوگئے

 

سارے جہاں کے درد سمٹ کر بصد نیاز

اُن کی قبائے پاک کے پیوند ہوگئے

 

اُس آستانِ پاک کا اللہ رے فیضِ عام

جو دل زدہ بھی آگئے خورسند ہوگئے

 

آقا کے در سے اُن کو مِلی منزلِ مراد

جن پر نشاطِ زیست کے دَر بند ہوگئے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ