اُن کی یاد آئی تو بھر آئے سحابِ مژگاں

اُن کی یاد آئی تو بھر آئے سحابِ مژگاں

کُھل کے برسا ہے مرے قلب پہ آبِ مژگاں

 

ایک دیدار کی اُمید سے نکہت لے کر

کِھل سے جاتے ہیں سرِ شام گُلابِ مژگاں

 

کوئے انوار سے اک ناقہ سوار آئیں گے

بس اُنہی کے لئے وا رہتا ہے بابِ مژگاں

 

اک تصوّر ہے جسے اور کوئی دیکھ نہ لے

اُس پہ رکھتا ہوں میں ہر وقت حِجابِ مژگاں

 

اِس کا مقصُود ہے اک شہرِ معطّر کا طواف

بس اِسی شوق میں بہتا ہے چنابِ مژگاں

 

موڑ مُڑتے ہی پڑی گنبدِ اخضر پہ نظر

ایک ہی پل میں سوا ہو گئی تابِ مژگاں

 

اِک نہ اِک روز تو تعبیر اسے چُومے گی

ایک دیدار کی حسرت میں ہے خوابِ مژگاں

 

کتنا رویا ہُوں مدینے میں حُضُوری کے لئے

فردِ اعمال میں لکھا ہے حسابِ مژگاں

 

قلبِ اشفاق کے ابلق پہ سواری کیجے

تھام کر بیٹھا ہُوں مُدّت سے رکابِ مژگاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ