اردوئے معلیٰ

Search

اِک تمنائے ارتکاز ہے تُو

زیست کا لمحۂ جواز ہے تُو

 

اعتزازِ نیازِ حرفِ فراز !

شانِ انداز ، جانِ ناز ہے تُو

 

دیدنی ہی سہی وفورِ طلب

دید کا مہبطِ نیاز ہے تُو

 

مطلعِ کُن پہ تُو نظر افروز

مقطعِ کُن کا بابِ باز ہے تُو

 

مجھ سے متروک پر عنایت کا

اے کرم خُو ! فقط ، مجاز ہے تُو

 

بے نہایت ہے تیری شانِ عطا

خیر کا سایۂ دراز ہے تُو

 

بے نواؤں کا وارث و والی

کم نصیبوں کا کار ساز ہے تُو

 

اے شرَف دارِ شانِ نورِ الہٰ

بشریت کا اعتزاز ہے ہے تُو

 

کس تناظر میں تیری مدح کروں

مَیں نگوں سار اور فراز ہے تُو

 

مالکِ حوض و صاحبِ محمود !

منبعِ اوجِ امتیاز ہے تُو

 

عجز افزا ہے خامۂ مقصودؔ

معنئ دیر یاب ! راز ہے تُو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ