اردوئے معلیٰ

آیا ہے مجھ کو بُلاوا سُوئے شہرِ دلنشیں

آیا ہے مجھ کو بُلاوا سُوئے شہرِ دلنشیں

یونہی بے خود تو نہیں ہے یہ دلِ امیّد بِیں

 

خیمہ زن ہیں نکہت و رنگت کے ہر سُو قافلے

کوچۂ شہرِ کرم ہے رشکِ صد خُلدِ بریں

 

نصِ قطعی نے ہی خاطی کو دکھائی تیری رہ

فردِ عصیاں لے کے آیا ہُوں شفیعِ مُذنبیں

 

آنکھ میں جاری ہے اب پتھر سے پانی کا سفر

چشمِ حیرت میں بھی آ ! اے گوشۂ دل کے مکیں

 

کس تماثل میں بیاں ہو عظمتِ شہرِ کرم

چاند تارے سنگریزے، آسماں گردِ زمیں

 

ایک کیفِ مستقل میں ہے وجودِ روز و شب

تیرا اسمِ نُور لذّت، تیری مدحت انگبیں

 

بام پر ہونے کو ہے اِک ساعتِ حیرت طلوع

مطمئن ہے دیر سے میرا دلِ اندوہ گیں

 

مستند ہے تیری نسبت کی سند اعزاز کو

کافی ہے تیرا سہارا سرورِ دنیا و دیں

 

تیری انگلی کے اشارے سے ہُوا مہتاب شق

تیری مرضی پاکے واپس آ گیا مہرِ مبیں

 

منفعل ہے طُرفہ طلعت پر خیالِ نارسا

تُو تصور سے فزوں تر، تُو دل و جاں سے قریں

 

فیصلہ مقصودؔؔ لکھا ہے پرِ جبریل نے

عُمر ہا گردیدہ ام ! لیکن کوئی تجھ سا نہیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ