اردوئے معلیٰ

اک تسلسل ہے کہ ٹوٹا ہے نہ ٹوٹے گا کبھی

تا قیامت ہی چلے محمدتِ مصطفوی

 

میں ہوں من جملہ گدایانِ درِ پاکِ نبی

میں بھی مجبورِ محبت کہ ثنا یہ لکھی

 

للہ الحمد ہمارے لئے بھیجا وہ نبی

جس کا ہے تاجِ نبوت وَ رسالت ابدی

 

پیکرِ حسنِ دو عالم ہے وہ سر تا بہ قدم

جلوۂ رخ پہ کسی کی بھی نظر ٹک نہ سکی

 

خلقِ اطہر وہ کہ خود خالقِ کل ہے مداح

عینِ قرآں بہ زبانِ حرمِ پاکِ نبی

 

یہ بتاتی ہے ہمیں آیۂ فرقانِ عزیز

اسوۂ پاک نمونہ پئے نوعِ بشری

 

شرفِ خاص یہ میرے ہی نبی کو حاصل

عرشِ کے رب سے سرِ عرش ہوئی ہم سخنی

 

ہے شہنشاہِ ہدیٰ، سرورِ عالم لیکن

نہ کوئی شیش محل ہے نہ کوئی بارہ دری

 

طعنہ و سبّ و شتم خندہ جبینی سے سہے

راہِ مولا میں یہ دل اور یہ ثابت قدمی

 

اپنی امت کے لئے وقفِ خدا پیشِ سجود

سوز ہے دل میں، دعا لب پہ ہے آنکھوں میں نمی

 

آخرت اپنی سنور جائے یہ دنیا بھی بنے

ہوں جو ہم تابعِ فرمانِ رسولِ مدنی

 

نظرِؔ رحمت یزداں ہے ہماری جانب

نعتِ محبوبِ خداوند کی یہ خوش اثری

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات