اردوئے معلیٰ

اگر اے نسیمِ سحر ترا! ہو گزر دیار ِحجاز میں

مری چشمِ تر کا سلام کہنا حضورِ بندہ نواز میں

 

تمہیں حدِ عقل نہ پاسکی فقط اتنا حال بتا سکی

کہ تم ایک جلوہء راز تھے جو نہاں ہے رنگِ مجاز میں

 

نہ جہاں میں راحتِ جاں ملی ، نہ متاعِ امن و اماں ملی

جو دوائے دردِ نہاں ملی ، تو ملی بہشتِ حجاز میں

 

عجب اک سُرور سا چھا گیا مری روح و دل میں سما گیا

ترا نام ناز سے آگیا مِرے لب پہ جب بھی نماز میں

 

کروں نذر نغمہء جاں فزا میں کہاں سے اخترِ بے نوا

کہ سوائے نالہء دل نہیں مرے دل کے غمزدہ ساز میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات