اردوئے معلیٰ

ایسا کوئی محبوب نہ ہو گا نہ کہیں ہے

ایسا کوئی محبوب نہ ہو گا نہ کہیں ہے

بیٹھا ہے چٹائی پہ مگر عرش نشیں ہے

 

مِلتا نہیں کیا کیا، دو جہاں کو ترے در سے؟

اِک لفظ “نہیں“ ہے، کہ ترے لب پہ نہیں ہے

 

تُو چاہے تو ہر شب ہو مثالِ شبِ اسرٰی

تیرے لئے دو چار قدم عرش بریں ہے

 

رُکتے ہیں وہیں جا کے قدم اہلِ نظر کے

اُس کوچے کے آگے نہ زماں ہے نہ زمیں ہے

 

ہر اِک کو مُیّسر کہاں اُس در کی غُلامی

اُس در کا تو دربان بھی جبریلِ امیں ہے

 

دل گریہ کناں اور نظر سُوئےِ مدینہ

اعظم ترا اندازِ طلب کتنا حسیں ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ