اردوئے معلیٰ

Search

ایک برقی رو لہکتی ہے مرے احساس میں

جلوہ فرما تو ہے میرے پردۂ انفاس میں

 

کیوں نہ مل جائے اُسے لَا تَقْنَطُوْا کی پھر نوید

جب اُتر آئے کرم تیرا نگاہِ یاس میں

 

کیوں نہ بن جائے ہماری زندگی بھی اِک مثال

یاد تجھ کو گر رکھیں خُوش حالی و افلاس میں

 

تو ہویدا ہے اگر عُسرت زدوں کی آہ سے

بس گیا ہے متّقی اشخاص کی بُو باس میں

 

ملّتِ بیضا کا ہے روح و رَواں تیرا خیال

تیرے دم سے زندگی ہے قوم کی ہر آس میں

 

تُو نے سرکارِ دو عالم میں انھیں یکجا کیا

وہ خصائص جو تھے نوحؑ و عیسیٰؑ و الیاسؑ میں

 

تیرے ہی دم سے طبائع میں بھی پیدا اختلاف

ہے تنوّع لذتوں کا گر تمام اجناس میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ