اردوئے معلیٰ

Search

اے تیری بارگاہ میں جبریل سجدہ ریز

اے تجھ سے خو دزبانِ خداوند ہم کلام

 

اے تیری بزم، بوذرؔ، سلماںؔ سے ہم کنار

اے تیرے لب پہ رقصِ کناں، وحی کے پیام

 

اے حاملِ رسالتِ محکم، تجھے سلام

لالے کو دے کے، ذوقِ جگر کاویِ حیات

 

شبنم سے، تونے راز گلستاں کیا ہے فاش

قرباں تری اداؤں کے، دستِ خلیلؑ سے

 

آزر کے آئینے کو ، کیا تونے پاش پاش

اے امتزاجِ شعلۂ و شبنم، تجھے سلام

 

ترتیب دے کے، دانش و دیں کے اصولِ نو

اسرارِ زندگی کو ، نمایاں بنادیا

 

پھونکی وہ روح، تونے ضمیر حیات میں

انساں کو اصل معنوں میں انساں بنا دیا

 

تہذیبِ زندگانیِ آدم، تجھے سلام

دونوں ہیں، تیرے خرمنِ عرفاں کے خوشہ چیں

 

عقلِ ادا شناس وجنونِ زیان و سود

روشن ہے تیرے نور سے ، یہ بزم شش جہات

 

محکم ہے تیری ذات سے، شیرازۂ وجود

اے رازِ آفرینشِ عالم، تجھے سلام

 

وہ نعمتِ تمام، وہ روحانیت کی جان

قرآن، تجھ کو لاکے دیا جبرئیل نے

 

دونوں جہاں کو بخش دیا جلوۂ دوام

پیغام کیا دیا تجھے ربِّ جلیل نے

 

بارانِ ابرِ رحمتِ پیہم، تجھے سلام

اسلام کے پیمبرِ اعظم، تجھے سلام

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ