اردوئے معلیٰ

Search

اے خُدا نصیب میں رکھ درِ مُصطفے کے بوسے

ھُوں سگِ درِ محمد کبھی دُوں  میں جا کے بوسے

 

کوئی رُوح تک اُترتا جو پیام لا رہی ھے

میرے دِل نے احتراما لیئے اُس ھوا کے بوسے

 

میں مچلتے دِل پہ آقا، نہیں رکھ سکا ھوں قابو

سو یہ نذر کر رہا ھوں، سرِ دِل لگا کے بوسے

 

جو انی پہ چڑھ کہ قُرآں کی تِلاوتوں پہ قادر

یہ فِضائیں لے رہی ہیں شہِ کربلا کے بوسے

 

وُہ مُحبّتوں کا منبع، وُہ عقِیدتوں کا مرکز

جسے میں نے لب پہ رکھا ھے سدا بنا کے بوسے

 

کوئی دھن کی چاہ میں ھے، کوئی دِین کی طلب میں

ہیں مِری طلب میں آقا، تِرے نقشِ پا کے بوسے

 

مُجھے عِشقِ مصطفے سے جو مِلا ھے کشف حسرتؔ

میں خلوص کے چمن میں جیؤں گا اُگا کے بوسے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ