اردوئے معلیٰ

Search

اے شہِیدِ کربلا تُجھ پر فِدا میری وفا

کاش تیری ذات سے بن جائے میرا سِلسِلہ

 

ہے کرم اللہ کا گرویدہ ہیں اسلام کے

ہر جگہ جلوہ نما وہ عکس اس کا جا بجا

 

جاں نچھاور کی ہی تو نے عظمتِ اسلام پر

اللہ اللہ  برہنہ خنجر تلے سجدہ کیا

 

لے کے مشکِیزہ چلے جانا حصولِ آب کو

الاماں شمشِیر لہرانا وہاں عباسؓ کا

 

تِیر کھا کر اصغرِؓ معصوم نے بھی جان دی

اور لوگو حضرتِ قاسمؓ کا سہرا لُٹ گیا

 

کاش ہوتا میں بھی حسرتؔ کربلا میدان میں

اِن شہِیدوں میں مِرا بھی نام رہ جاتا لِکھا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ