اردوئے معلیٰ

اے شہ انبیاء سرورِ سروراں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

بر ملا کہہ رہے ہیں زمیں و زماں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

 

نور تو سبب گھرانہ تیرا نور کا تو سہارا ہے لاچار و مجبور کا

ہادی اِنس و جاں حامی بیکساں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

 

تو چلے تو فضائیں تیرے ساتھ ہوں بادلو ں کی گھٹائیں تیرے ساتھ ہوں

مٹھیوں سے ملے کنکروں کو زباں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

 

کوئی سمجھے گا کیا تیرے اسرار کو آئینے بھی ترستے ہیں دیدار کو

تیرے قدموں میں رکھتی ہے سر کہکشاں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

 

ذکر تیرا دعاؤں کا سرتاج ہے غمزدوں بے سہاروں کی معراج ہے

ہر فنا شے تیرا ذکر ہے جاوداں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

 

تیری انگلی کا جس سمت اِشارہ گیا چاند کو بھی اسی سو اتارا گیا

تاجور دیکھتے رہ گئے یہ سماں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

 

آس آنکھوں میں جگمگ ہے تیری ضیاء اے حبیبِ خدا خاتم الانبیاء

اے شفیع الامم مرسلِ مرسلاں تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات