اے عالم نجوم و جواہر کے کردگار

اے عالم نجوم و جواہر کے کردگار

اے کارسازِ دہر و خدا وندِ بحر و بر

 

ادراک و آگہی کے لیئے منزل مراد

بہر مسافرانِ جنوں ، حاصلِ سفر

 

یہ برگ و بار و شاخ و شجر ، تیری آیتیں

تیری نشانیاں ہیں یہ گلزار ودشت و در

 

یہ چاندنی ہے تیری تبسم کا آئینہ

پر تَو تیرے جلال کا بے سایہ دوپہر

 

موجیں سمندروں کی، تیری رہگزر کے موڑ

صحرا کے پیچ و خم تیرا شیرازہ ہنر

 

اجڑے دلوں میں تیری خاموشی کے زاویے

تابندہ تیرے حرف ، سرِ لوحِ چشم تر

 

موجِ صبا خرام تیرے لطفِ عام کا

تیرے کرم کا نام ، دعا در دعا ،اثر

 

اے عالم نجوم و جواہر کے کردگار

پنہاں ہے کائنات کے ذوقِ نمو میں تو

 

تیرے وجود کی ہے گواہی چمن چمن

ظاہر کہاں کہاں نہ ہوا رنگ و بو میں تو

 

میری صدا میں ہیں تیری چاہت کے دائرے

آباد ہے سدا مرے سوزِ گلو میں تو

 

اکثر یہ سوچتا ہوں کہ موجِ نفس کے ساتھ

شہ رگ میں گونجتا ہے لہو، یا لہو میں تو

 

اے عالم نجوم و جواہر کے کردگار

مجھ کو بھی گرہِ شام و سحر کھولنا سکھا

 

پلکوں پہ میں بھی چاند ستارے سجا سکوں

میزانِ خس میں مجھ کو گہر تولنا سیکھا

 

اب زہر ذائقے ہیں زبانِ حر وف کے

ان ذائقوں میں خاک شفا گھولنا سکھا

 

دل مبتلا ہے کب سے عذابِ سکوت میں

تو ربِّ نطق و رب ہے مجھے بولنا سکھا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

خدا ہے حامی و ناصِر ہمارا
خدایا میں نحیف و ناتواں کمزور انساں ہوں
سدا دِل میں خدا کی یاد رکھنا
کہوں حمدِ خدا میں کس زباں سے
ترے انوار دیکھوں یا خُدا مجھ کو نظر دے
خدا قائم ہے دائم جاوداں ہے
عبادت ہو ادا کچھ اِس ادا سے
کرم کا مرحلہ پیشِ نظر ہے
خدا نے سب جہاں پیدا کئے محبوبؐ کی خاطر
خدا کے ذکر پر مامور ہوں میں