اردوئے معلیٰ

اے قبلۂ مقال مرے، کعبۂ نظر

بہرِ نیاز لایا ہُوں یہ حرفِ بے ہُنر

 

آ جائے پھر بُلاوا درِ خیر بار سے

للہ لیجیے مرے ارمان کی خبر

 

سوچوں کی سنگلاخ زمیں پر نہیں ! نہیں

اے موجۂ خیالِ نبی روح میں اُتر

 

نکتہ ورانِ شہرِ سخن ! یوں بھی سوچیے

مدحت رہِ اماں ہے، نہیں راہِ پُر خطر

 

’’لازم ہے دل کے ساتھ رہے پاسبانِ عقل‘​‘​

آدابِ نعت پیشِ نظر ہوں بصد حذر

 

مَیں بے سبب نہیں ہُوا ہوں، بے نیازِ غم

وہ دستِ خیرِ کُل ہے مرے دستِ عجز پر

 

صوتِ دروں میں ذکرِ مدینہ رہا مدام

سانسوں کے ساتھ ساتھ چلی اُن کی رہ گُزر

 

تیرے وجودِ نُور سے ہے اعتبارِ زیست

’’یَا صَاحبَ الجمالِ و یا سیّدَ البشَر‘​‘​

 

ہر استعارہ حُسن کا ہے عکسِ حُسنِ کُل

’’مِن وَجہِکَ المُنیرِ لَقَد نُوِّر القمَر‘​‘​

 

’’لَا یُمکِنُ الثّناُ کَمَا کانَ حَقُّہٗ‘​‘​

یوں تو حروفِ عجز کا ہے شوق راہبَر

 

مقصودؔ میری نعت کا ہے مقطعِ نیاز

’’بعد از خُدا بزرگ تُوئی قصّہ مختَصر‘​‘​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات