اردوئے معلیٰ

Search

اے مرے خدا مرے مہرباں مجھے ایسا وصفِ کمال دے

ترا نام ورد زباں رہے مجھے ایسے سانچے میں ڈھال دے

 

کروں ہر گھڑی میں تری ثنا مری سانس میں ترا شکر ہو

ترا قرب ہو تری ذات ہو کوئی ایسا لمحہ وصال دے

 

ترا سنگ ہو یہ امنگ ہو تری بارگہ میں پڑی رہوں

مجھے اپنے رنگ میں رنگ دے مری بے بسی کو زوال دے

 

رہے قلب میں تری روشنی ترے ذکر کی رہے چاندنی

بسے آنکھ میں جو تری چمک مجھے اپنا جلوہ جمال دے

 

میں کروں بیاں تری عظمتیں تری رفعتیں تری جلوتیں

میں جو سوچوں تیرے سوا کبھی مرے اُس خیال کو ٹال دے

 

ملے عشق تیرے حبیب کا مرا جینا مرنا اسی میں ہو

کروں تیرے نام پہ جاں فدا مجھے بھیکِ عشقِ بلال دے

 

میں فقیر تیرے ہی در کی ہوں ، نہیں کوئی میرا ترے سوا

ترے پاس کوئی کمی نہیں مری خالی جھولی میں ڈال دے

 

رہے خیر پر مرا خاتمہ ہے یہ قلبِ ناز کی التجا

میں لحد میں تیری ثنا کروں مجھے ایسا بخت کمال دے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ