اردوئے معلیٰ

Search

اے نقطۂِ سطوحِ جہاں ! اے مدارِ خلق !

تو محورِ نفوس ہے ، تو اعتبارِ خلق

 

تاریکیِٔ ضَلال میں بہرِ نشانِ فوز

ہے اسوۂِ سراجِ مُنیری مَنَارِ خلق

 

اک تیری یاد ٹھہری ہے تعویذ ہر بلا

اک تیرا اسم خیر صفت ہے حصارِ خلق

 

اِک دستِ مصطفیٰ کے تصرف میں نَظمِ کل

اِک بازوئے رسول پہ سارا ہے بارِ خلق

 

بازارِ ہست میں ہیں ترے دم سے رونقیں

چلتا ہے تیرے نام سے ہی کاروبارِ خلق

 

صورت تری ہے ناز گہِ قدرتِ خدا

مخلوقیت تری ہے شہا ! افتخارِ خلق

 

مرفوع جو ہو شانِ ” رفعنا ” کی نعت سے

مجرور کیا کرے گا اسے حرفِ جارِ خلق

 

وجہِ نُشور و کُن ہیں معظمؔ قسیمِ کُل

المختصر انہی پہ ہے دار و مدارِ خلق

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ