اردوئے معلیٰ

اے کائنات تجھ میں سمایا ہے اک جہاں

اے کائنات تجھ میں سمایا ہے اک جہاں

سب سے مگر حسین نبی کا ہے آستاں

 

روضے پہ کچھ زبان سے بولا نہیں گیا

اشکِ رواں سے حالتِ دل ہوگئی عیاں

 

سیدھی سماعتوں سے اترتی تھی قلب میں

حضرت بلالَ حبشی سناتے تھے وہ اذاں

 

پایا کریم تونے حلیمہ سلام ہو

تکتی تھیں تیری اونٹنی حیرت سے دائیاں

 

جن کو چَرا رہے تھے مرے مصطفٰی کریم

اِترا رہی تھیں شان سے وہ ساری بکریاں

 

منظر بیان کیسے کیا جائے ، کس طرح

جس دم نظر کے سامنے آئیں وہ جالیاں

 

محبوب اس سے آگے چلے آؤ بس تمہی

جبریل کی مجال نہیں آئے درمیاں

 

دامن بھرا ہے مدحتِ سرکار سے عطا

ورنہ تو جا رہی تھی مری عمر رائگاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ