اردوئے معلیٰ

اے کہ ہے حسن ترا زینت و عنوانِ جمال

اے کہ ہے حسن ترا زینت و عنوانِ جمال

اے کہ ہے ذات تری یوسف کنعانِ جمال

 

اے کہ ہے نور ترا روغنِ تصویرِ وجود

اے کہ ہے نام ترا رونقِ ایوانِ جمال

 

اے کہ زلفوں سے تری عشق کی شامیں روشن

اے کہ چہرہ ہے ترا صبح درخشانِ جمال

 

جز ترے کون ہے مخدومِ جہانِ خوباں

جز ترے کون ہے کونین میں سلطانِ جمال

 

یاد تیری ہے انیسِ دل جبریلِ امیں

تذکرہ تیرا ہے موضوعِ ثنا خوانِ جمال

 

تھی سلیماں کو فقط ملکِ سبا تک شاہی

دونوں عالم کے لیے تو ہے سلیمانِ جمال

 

زندگی مدحِ شہ کون و مکاں میں ‌گزری

ہوسکا شعر کوئی پھر بھی نہ شایانِ جمال

 

کب ترا حسن ہے محتاجِ ثنائے دگراں

کہ تری ذات ہے خود حجت و برہانِ جمال

 

دیدہ ور ہوں ، مرا معیار نظر ٹھہرے ہیں

تیرے مشتاقِ لقا ، تیرے شہیدانِ جمال

 

آکریں حلقہ بگوشانِ نبی کی باتیں

کہ ہے جاں بخش بہت ذکرِ ندیمانِ جمال

 

میری نظروں میں بھی اک دن تھا جمالِ طیبہ

میں بھی اک روز مدینے میں تھا مہمانِ جمال

 

شہرِ محبوب میں جب مست و غزل خواں پہنچیں

یاد مجھ کو کریں جلد محبانِ جمال

 

مانگ اللہ سے اندازِ نگاہِ صدیق

کوئی آساں نہیں سرکار کا عرفانِ جمال

 

غمِ دنیا ہے نہ اندیشہ عقبی کوئی

بے نیازِ غمِ کونین ہیں مستانِ جمال

 

کوچہ کوچہ ہے شہِ دیں کے وطن کا فردوس

گوشہ گوشہ ہے مدینے کا گلستانِ جمال

 

حیدر و فاطمہ ہیں باغِ محمد کی بہار

ہیں حسین اور حسن سنبل و ریحانِ جمال

 

مظہرِ شانِ خدا ، خسرو ملکِ خوبی

ایک جلوئے کو ترستے ہیں گدایانِ جمال​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ