اردوئے معلیٰ

اے گل باغ شاہ دیں نواب

شیر یزداں کے جانشیں نواب

 

رشک کرتے ہیں اولیاء تجھ پر

منزلیں وہ تجھے ملیں نواب

 

آہوانِ جمال جس پہ فدا

ہے تری چشم سرمگیں نواب

 

سوچ کر تیرے خندۂ لب کو

میری دنیا ہوئی حسیں نواب!

 

تحفۂ دید کی تمنا ہے

اے قرار دل حزیں نواب!

 

سارے اہل کمال و اہل ہنر

ہیں ترے در کے خوشہ چیں نواب

 

میں نے جس موڑ سے پکارا ہے

آئے امداد کو وہیں نواب

 

مل گیا آپکا در عالی

آسماں پا گئی، زمیں نواب

 

چاندنی شفقتوں کی بکھرا دو

میرے رشکِ مہہِ مبیں نواب !

 

تونے پلکیں اٹھائیں جس لمحہ

خم ہوئی وقت کی جبیں نواب

 

میرے دل کے صدف میں مثل گہر

ہے تری یاد جاگزیں نواب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات