بات کر میرے ہم نشیں کچھ بھی

بات کر میرے ہم نشیں کچھ بھی

مجھ کو تو سوجھتا نہیں کچھ بھی

 

لمس ہونٹوں کو چاہیے تیرا

دست و عارض لب و جبیں کچھ بھی

 

منہدم ہو رہا ہے دل کا مکاں

اور کہتا نہیں مکیں کچھ بھی

 

وسوسے نوچتے رہے دل کو

کر نہ پایا ترا یقیں کچھ بھی

 

ہم ، تہی دست بحرزادوں کو

دے نہ پائی کوئی زمیں کچھ بھی

 

اور بعد از خرابیِ بسیار

یہ کھلا ہے کہ کچھ نہیں کچھ بھی

 

ہم کہ خودساختہ خدائے سخن

نہ ہوئے وقت کے تئیں کچھ بھی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ