باعثِ ردِ بلائے دو جہاں میرے نبی

 

باعثِ ردِ بلائے دو جہاں میرے نبی

آپ ہی ہیں دافعِ ہر اک زیاں میرے نبی

 

پردۂ قربت میں رب نے کیا دیا کتنا دیا

صرف رب ہے اور اس کے راز داں میرے نبی

 

آپ کی آمد پہ طیبہ میں نرالی دھوم تھی

دف پہ گاتی تھیں ترانے بچیاں میرے نبی

 

انگلیوں کی اوٹ سے حسان نے دیکھا اسے

آپ کا چہرہ تھا کتنا ضوفشاں میرے نبی

 

حشر میں ہم سے گنہگاروں کو مل جائے گا چین

آپ جب تشریف لائیں گے وہاں میرے نبی

 

آپ کے در سے ملی خیرات پر زندہ ہوں میں

آپ کا ہی نام ہے وردِ زباں میرے نبی

 

آبدیدہ ہوں غمِ عشقِ رسولِ پاک میں

شہرِ طیبہ سے ملے تسکینِ جاں میرے نبی

 

گردشِ ایام سے ہے حالِ دل زار و زبوں

ذکر سے ہے آپ کے آرامِ جاں میرے نبی

 

وقتِ رخصت آبشارِ غم رواں آنکھوں سے ہے

اس حزیں منظرؔ کی ہے سولی پہ جاں میرے نبی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ