اردوئے معلیٰ

Search

باغِ عالم میں ہے دِلکشی آپ سے

اور پھولوں میں ہے تازگی آپ سے

 

کُفر کا دور تھا ظُلمتیں جابجا

ہو گئی دہر میں روشنی آپ سے

 

قاسمِ نعمتِ کبریا آپ ہیں

جو بھی دولت مِلی وہ مِلی آپ سے

 

رہنما سیرتِ طیّبہ آپ کی

لے رہا ہے جہاں آگہی آپ سے

 

یہ زمین و زماں یہ مکین و مکاں

ہے سبھی کی بقا یا نبی آپ سے

 

اور کیا غیب ہو آپ سے کچھ نہاں

ذاتِ ربُّ العُلیٰ نا چُھپی آپ سے

 

رُخ کی طلعت شہا مُجھ کو دِکھلائیے

رات دن یہ مری لو لگی آپ سے

 

بات بگڑی ہوئی میری پل میں بنی

دل سے فریاد جب میں نے کی آپ سے

 

دم میں جب تک ہے دم نعت مرزا کہے

عرض ہے عاجزانہ یہی آپ سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ