اردوئے معلیٰ

Search

بخت لگتا ہے کہ یاور ابھی ہونے لگا ہے

روبرو نور کا پیکر ابھی ہونے لگا ہے

 

میں بھی تو شہرِ کرم بار کے رستے میں ہوں

سنگریزہ تھا تو گوہر ابھی ہونے لگا ہے

 

وہ جو اک تاج سرِ عجز ہے نعلینِ کرم

دیکھنا نازشِ اختر ابھی ہونے لگا ہے

 

میرے بیٹے کو بھی اب نعت کی تلقین کریں

وہ مرے قد کے برابر ابھی ہونے لگا ہے

 

اُن کی زلفوں میں چمکتا ہوا نوری قطرہ

شیشۂ دل پہ سمندر ابھی ہونے لگا ہے

 

میرے گھر آنے لگے ہیں یہ پیامی جھونکے

میرا گھر بار معطر ابھی ہونے لگا ہے

 

دل کہ بیمار تھا، پژمردہ تھا ، افسردہ تھا

آپ کی یاد سے بہتر ابھی ہونے لگا ہے

 

ذرا سوچاہی تھا مقصودؔ کہ اک نعت لکھوں

خامۂ شوق منور ابھی ہونے لگا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ