اردوئے معلیٰ

بر حق ہے جو اس فضل پہ اترائے مدینہ

آغوش میں اس کی ہے دل آرائے مدینہ

 

طیبہ کے تصور سے دل آباد ہے اپنا

لب میرے شکر داں بہ سخن ہائے مدینہ

 

اے موجِ نسیم آ کہ تجھے دل میں سمو لوں

ہے تجھ میں سرائیت بوئے گل ہائے مدینہ

 

مجھ بندۂ عاصی کو بھی ہے خواہشِ دیدار

اب مرضی رب جب بھی وہ پہنچائے مدینہ

 

ہے چشمِ تصور کا مری شغل یہ ہر شب

فلماتا ہے روضہ کبھی فلمائے مدینہ

 

سو رنگ بھرے دل میں مٹا دے غم و آلام

فانوسِ تصور میں جب آ جائے مدینہ

 

سننے کے لئے آئے فرشتے سرِ محفل

ہے تذکرۂ پاکِ دل آرائے مدینہ

 

دیکھوں گا انہیں جب تو سرِ حشر کہوں گا

اک ساغرِ کوثر مجھے آقائے مدینہ

 

جب آئے مجھے لینے مری مرگِ مفاجات

ہو نام لبوں پر ترا آقائے مدینہ

 

میں ان کو تکا کرتا ہوں حسرت کی نظرؔ سے

جو لوگ یہ کہتے ہیں کہ دیکھ آئے مدینہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات