اردوئے معلیٰ

Search

بساطِ ارض ہے تم سے یہ آسماں تم سے

ضیائے شمس و قمر، نورِ کہکشاں تم سے

 

خدا کی حمد میں رطب اللسانیاں تم سے

یہ پنجگانہ و تسبیح، یہ اذاں تم سے

 

گرہ کشائی اسرارِ دو جہاں تم سے

کہاں ملیں گے زمانے کو راز داں تم سے

 

فروغِ لالہ و گل، رنگِ گلستاں تم سے

ہے بلبلوں کی محبت کی داستاں تم سے

 

تمہاری ذات سراپا ہے عفو و رحم و کرم

کہاں ملے کسی امت کو مہرباں تم سے

 

پہنچ سکا نہ کبھی جو کہ اپنی منزل پر

ہوا ہے فائزِ منزل وہ کارواں تم سے

 

رہِ حیات کے ہر موڑ پر ہو تم رہبر

ہے فیض یاب یہ انساں کہاں کہاں تم سے

 

تمہارے پاؤں سے لپٹے جو ذرۂ ناچیز

بنے وہ رشکِ مہ و خور شہ شہاں تم سے

 

تمہاری رحمتِ بے پایاں دیکھ کر شاہا

ہوا ہے رحم طلب طیرِ بے زباں تم سے

 

تمہارے سر پہ ہے تاجِ شفاعتِ کبریٰ

امیدِ قلبِ پریشانِ عاصیاں تم سے

 

بروزِ حشر کرم کی نگاہ اس پر بھی

لگائے آس ہے آقا یہ نعت خواں تم سے

 

فرازِ عرش پہ نعلینِ پاک کی آہٹ

نظرؔ ملائے شرف میں کوئی کہاں تم سے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ