اردوئے معلیٰ

Search

بس وہی سنتا ہے دُعا سب کی

در گزر کرتا ہے خطا سب کی

 

وہ جو رازق ہے کُل جہانوں کا

اُس کے قبضے میں ہے غذا سب کی

 

بس وہی ایک سب کا داتا ہے

جھولیاں بھرتا ہے خدا سب کی

 

حیّ و قیوم، ذاتِ باری ہے

آئے گی دیکھنا قضا سب کی

 

جتنے اَمراض ہیں زمانے میں

اس کے ہی پاس ہے دوا سب کی

 

رب نے پانی کی دی ہمیں نعمت

زندگی ٹھہری ہے ہَوا، سب کی

 

چاند سورج میں نور کس کا ہے

ربِّ کعبہ سے ہے ضیا سب کی

 

بس وہی ایسا اِک مصوّر ہے

صورتیں رکھتا ہے جدا سب کی

 

بندہ طاہرؔ ترا ہے عرض گزار

اے خدا اونچی کر نَوا سب کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ