اردوئے معلیٰ

Search

بلند بخت اس لئے بھی ہے تنا کھجور کا

کہ لمس اِس کی چھال میں ہے بازوئے حضور کا

 

یہ کائنات سرمئی کتاب کی مثال ہے

درِ نبی ہے گام گام حرف حرف نور کا

 

سماعتوں کے طاق میں چراغ تابدار ہیں

پیَمبری ہے آپکی کہ سلسلہ ہے نور کا

 

یہ سبز موسموں میں ہے نموئے تاب آپ سے

یہ منظروں میں حسن بھی ہے آپ کے ظہور کا

 

فراغ ہی نہ ہوگا دل کو ان کی جلوہ گاہ سے

تو کس کو آئے گا خیال سلسبیل وحور کا

 

ثنا گری میں زیرِ ذکر ہیں تمام ہیئتیں

حسیں ترین لگ رہا ہے سلسلہ بحور کا

 

میں امتی ہوں اور اوجِ ناز پر ہوں اس لئے

فضا کے اس دیار میں گزر نہیں غرور کا

 

رضا کے باب میں محبتوں کا سب کمال ہے

حِرا کو دیکھتا ہے جس طرح چراغ طور کا

 

وہ کیفیت ہے وجد کی کہ لگ رہا ہے عشق میں

غلام کا وجود بھی شجر کوئی سرور کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ