اردوئے معلیٰ

Search

بُلا لیجے مجھے پھر یا نبی دارِ فضیلت میں

کرم سے ہو مری پھر حاضری دارِ فضیلت میں

 

فرشتے رات دن بہرِ سلام آئیں اُسی در پر

شبانہ روز ہے رونق لگی دارِ فضیلت میں

 

مُرادوں سے وہاں دامن بھرے جاتے ہیں منگتوں کے

عطا سائل کو مُنہ مانگی مِلی دارِ فضیلت میں

 

شہِ کونین کے جُود و کرم کا واہ کیا کہنا

نہیں سُنتا نہیں کوئی کبھی دارِ فضیلت میں

 

چمکتا نور دیتا ہے وہاں پر گنبدِ خضرا

سدا رہتی ہے یُونہی روشنی دارِ فضیلت میں

 

اگرچہ حاضری سو بار ہو نیّت نہیں بھرتی

خدا نے ہے کشش ایسی رکھی دارِ فضیلت میں

 

درِ شہ پر جبینیں جُھک گئی ہیں تاجداروں کی

گدا بن کر کھڑی ہے خُسروی دارِ فضیلت میں

 

فقیرو ! بے نواؤ ! غم کے مارو! تم چلے آؤ

بنے گی بات ہر بگڑی ہوئی دارِ فضیلت میں

 

مجھے ہر سال طیبہ میں بُلانا یا رسول اللہ

نہایت عاجزی سے عرض کی دارِ فضیلت میں

 

فنا ہو کر مدینے میں بقا ہو جائے گی حاصل

ہو میرا اِختتامِ زندگی دارِ فضیلت میں

 

میرے شعر و سُخن کو ہو گیا اعزاز یہ حاصل

کرم سے نعت مرزا نے لِکھی دارِ فضیلت میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ