اردوئے معلیٰ

 

بڑھ گیا حدِ جنوں سے نام لیوا آپ کا

آپ کو خود مانگنے آیا ہے منگتا آپ کا

 

محفلِ محشر میں دیدارِ خدا ہوگا ضرور

کاش ایسے میں نظر آجائے جلوہ آپ کا

 

لاکھ سجدے ہوں مگر سجدے سے کیا حاصل اسے

جس کی قسمت میں نہ ہو نقشِ کف پا آپ کا

 

آفتابِ روزِ محشر کو چمکنے دیجیے

جلوہ گر ہے ہم سیہ کاروں پہ سایہ آپ کا

 

آپ کے در پر کسی کو موت آسکتی نہیں

دم بھرے گا مسکرا کر خود مسیحا آپ کا

 

عرش والے آپ کی صورت پہ قرباں ہو گئے

کیا سمجھ سکتے ہیں رُتبہ اہلِ دنیا آپ کا

 

بارگاہِ طور کا عالم کہوں کیا اے صبیحؔ

چشمِ موسیٰ! آج بھی پڑھتی ہے کلمہ آپ کا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات