بہارِ باغِ عدن ہے آقا تری صباحت کے صدقے واری

 

بہارِ باغِ عدن ہے آقا تری صباحت کے صدقے واری

تمام حسن و جمال آقا تری وجاہت کے صدقے واری

 

خطیب سارے ادیب سارے ہیں تیرے آگے سخن خمیدہ

فصاحتیں اور بلاغتیں سب تری خطابت کے صدقے واری

 

قطار اندر قطار ہیں کہکشائیں ساری مَلَک بھی سارے

شبِ ملاقات کل خدائی تری بصارت کے صدقے واری

 

سوا طلب سے بھی بھر گئی تھی ابوہریرہ کی خالی چادر

نوال و جود و عطائے عالم تری سخاوت کے صدقے واری

 

لعاب سے اپنے شیریں تُو نے کیا ہے کھاری کنوئیں کو آقا

ہے سلسبیلِ ارم ازل سے تری حلاوت کے صدقے واری

 

بشر کی صورت میں نوری پیکر ، سراپا ذاتِ خدا کے مظہر

حسین سارے جمیل سارے تری وجاہت کے صدقے واری

 

لطیف و پرنور جسم تیرا، ہے حُسنِ تقدیس اسم تیرا

نزاکتیں اور کرامتیں سب تری لطافت کے صدقے واری

 

مرا یہ ایماں ہے خاتم الانبیا ہے مولا مرے تو واللہ

ترا یہ منظرؔ فقیر و احقر تری نبوت کے صدقے واری

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ