اردوئے معلیٰ

Search

بہار بن کر حضور آئے تو پھیلی سارے چمن میں خوشبو

اجاڑ رستوں میں پھول مہکے سمائی کوہ و دمن میں خوشبو

 

کرم ہوا تو یہاں کی ٹھنڈی ہوا نے چومے وہ زلف و عارض

اسی نوازش سے آج پھیلی ہوئی ہے میرے وطن میں خوشبو

 

وہ میم ہے جس کے نور سے ہر چمن کو بخشی گئی ہے نکہت

لیا محمد کا نام لب سے بکھر گئی ہے دہن میں خوشبو

 

وہ چہرہ والشمس نکھرا نکھرا وہ زلف والّیل مہکی مہکی

نہ روئے گل پر ہی ایسا جوبن نہ ایسی باغِ عدن میں خوشبو

 

انہی سے ہے زینتِ نظارہ ، انہی سے ہے یہ جمال سارا

وہ جانِ گلشن ہوں بزم آرا ، تو کیوں نہ ہو انجمن میں خوشبو

 

یہ ماہتاب و چمن میں رنگ اور نور کے معجزے ہیں ان کے

مہکتی راتیں دمکتی صبحیں کلی میں جلوہ کرن میں خوشبو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ